Sunday, 1 December 2013

"دسمبر کے نام"ـــــــــــ 1 دسمــــــــــــــــبر 2013

گزرتا ہوا ہر لمحہ
 یہی بتلا رہا ہے
ہاں دسمبر آ رہا ہے
 
اک اداس سا نغمہ
یہ دل گا رہا ہے
ہاں دسمبر آرہا ہے
 
بچھڑ کہ تم سے
اے جاناں
اک اور سال
گزرا جارہا ہے
ہاں دسمبر آرہا ہے
 
خشک پتوں کو
ہر پیڑ اپنےوجود سے
کیوں گرا رہا ہے
ہاں دسمبر آ رہا ہے
 
سرمئی شاموں کو
اب اداس راتوں میں
شامل کرتا جا رہا ہے
ہاں دسمبر آ رہا ہے
 
سرد سرد ہواوں کو
یخ بستہ فضاووں کو
اپنی سرد مہری سے
سرد کرتا جارہا ہے
ہاں دسمبر آرہا ہے
 
تہماری یاد کا بادل
میرے اداس موسم کو
میری آنکھوں کی
رم جھم سے
بھگوتا جا رہا ہے
ہاں دسمبر آ رہا ہے
ہاں دسمبر آ رہا ہے
 
از: راشد ادریس رانا "دسمبر کے نام"  1-دسمبر-2013
 
 
 

Wednesday, 27 November 2013

دوسروں کی مدد کریں ------- پلیز

(میں نے یہ تحریر ایک پیج پر پڑھی، پڑھ کر آنکھوں مٰیں آنسو آگئے، مجھے بہت اچھی لگی، سوچا کیوں نہ آپ ک ساتھ بھی شیئر کی جاۓ۔ اگر اس کو پڑھ کر کسی ایک شخص کی سوچ بھی بدل گئی اور کسی ضرورت مند کی مدد کر دی گئی تو لکھنے والے کی محنت اور میرا شیئر کرنے کا مقصد پورا ہو جاۓ گا۔ )

ﻣﻐﺮﺏ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﻮئے ﺍﯾﮏ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺳﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﭘﮍﯼ ﻋﻤﺮ ﯾﮩﯽ ﮐﻮﺋﯽ ١٤ ﯾﺎ ١٥ ﺳﺎﻝ ﮨﻮﮔﯽ ﭘﺮ ﭘﺘﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﯾﺴﯽ ﮐﯿﺎ ﺑﺎﺕ ﺗﮭﯽ ﺍﺳﮑﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺭﮎ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ ﺩﯾﮑﮭﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﯽ ﺟﮕﮧ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺟﮩﺎﮞ ﺳﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﻭﮦ ﻧﮧ ﺩیکھ ﭘﺎئے ،
ﻭﮦ بچہ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻠﺘﮯ ہوئے ﺟﮭﺠﮏ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ، ﻧﻤﺎﺯﯾﻮﮞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﻗﺪﻡ ﺑﮍﮬﺎﺗﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ،
ﻣﯿﮟ سمجھ ﮔﯿﺎ کہ ﺍﺱ لڑکے ﮐو ضرور ﮐﻮﺋﯽ ﻣﺴﺌﻠﮧ درپیش ﮨﮯ۔
ﺧﯿﺮ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺁﮨﺴﺘﮧ ﺗﻤﺎﻡ ﻧﻤﺎﺯﯼ ﻣﺴﺠﺪ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﮔﮱ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ لڑکا ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺳﮯ ﭨﯿﮏ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ بیٹھ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﻧﮕﻠﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺁﮌﮬﯽ ﺗﺮﭼﮭﯽ ﻟﮑﯿﺮﯾﮟ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ ﻣﯿﺮﯼ ﺑﮯ ﺻﺒﺮﯼ ﻃﺒﯿﻌﺖ ﺑﮭﯽ ﺍﺏ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ کا ﺣﺎﻝ ﺍﺣﻮﺍﻝ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﮐﺴﺎﻧﮯ ﻟﮕﯽ ﺗﮭﯽ ﺳﻮ ﺍﺳﮑﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎﮐﺮ ﺯﻣﯿﻦ ﭘﺮ ﮨﯽ بیٹھ ﮔﯿﺎ ، ﻣﺠﮭﮯ ﺩیکھ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺍٹھ ﮐﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮨﺎتھ
ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺑﭩﮭﺎ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﭼﮭﺎ: ’’ﮐﯿﺎ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﯿﺮﻭ ﮐﯿﻮﮞ ﭘﺮﯾﺸﺎﻥ ﮨﻮ؟’’
جواب ملا: "کچھ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ"۔
ﯾﮧ ﮐﮧ ﮐﺮ ﻭﮦ ﭘﮭﺮ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺍﺳﮑﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮨﻮ ﻟﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺗﮭﻮﮌﯼ ﺩﻭﺭ ﺟﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﭘﮭﺮ ﺳﮯ ﺍﺳﮑﺎ ﮨﺎتھ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﺍﺳﮯ روکا ﺍﻭﺭ کہا کہ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﮨﻮﮞ ، ﺗﻢ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﺗﻮ ﮨﻮ ﮔﮯ؟
(ﺩﺭﺍﺻﻞ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﮐﮯ ﻣﺤﻠﮯ ﮐﮯ لڑکے ﻣﯿﺮﮮ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﮯ ﺩﻭﺳﺖ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً ﺳﺐ ﮨﯽ ﻣﺠﮭﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ)۔
ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺳﮯ ﺗﻮ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﮭﭙﺎﯾﺎ ﮐﺮﺗﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﺗﻢ ﮐﺴﯽ ﭘﺮﯾﺸﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ۔ ﺩﯾﮑﮭﻮ! ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﺑﮭﺎﺋﯽ ﺍﺗﻨﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﻭﺍﻻ ﺗﻮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺣﻞ ﮐﺮ ﺳﮑﮯ ﭘﺮ ﯾﺎﺭ ﺟﺘﻨﺎ ﮨﻮﺳﮑﺎ ﺍﺗﻨﺎ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﺮﻭﮞ ﮔﺎ۔ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﮐﺐ ﺳﮯ ﮨﯽ ﺑﺮﺳﻨﺎ ﭼﺎﮦ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻥ ﺑﺎﺗﻮﮞ ﺳﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺳﺎﻭﻥ ﮐﯽ ﺑﭙﮭﺮﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﺑﺮﺳﺎﺕ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﺮﺱ ﭘﮍﯾﮟ۔ ﯾﮧ ١٥ ، ١٤ ﺳﺎﻝ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﺑﮩﺖ ﺣﺴﺎﺱ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺑﭽﮧ ﺍﺱ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﻧﺌﯽ ﻧﺌﯽ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺴﺎﻧﯽ ﻋﺎﺩﺕ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﮯ ، ﻣﺤﺴﻮﺳﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺩکھ ﯾﺎ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﮯ ﻣﻄﻠﺐ ﺳﻤﺠﮭﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ اسے بہت ﻣﺸﮑﻞ ﺳﮯ ﭼﭗ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ پھر اﺳﮯ ﮐﺮﯾﺪﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﺗﻮ ﺟﻮ کچھ ﺍس نے ﮐﮩﺎ ﻭﮦ ﺁﭖ ﻟﻮﮔﻮں ﺳﮯ ﺷﯿﺌﺮ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﮞ۔

* * *
ﻣﯿﮟ ﻓﻘﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ، اللہ ﻗﺴﻢ ﻣﯿﮟ ﻓﻘﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﮞ۔ کچھ ﻋﺮصہ ﭘﮩﻠﮯ ﺟﺐ ﺍﺑﻮ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﮐﯽ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﻟﯿﻨﮯ ﺟﺎﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ تو انہیں ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﮔﻮﻟﯽ ﻣﺎﺭ ﺩﯼ ، ﭘﻮﻟﯿﺲ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﮩﺘﮯ ہیں کہ ﺗﻤﮭﺎﺭﮮ ﺍﺑﻮ ﮐﯽ "ﭨﺎﺭﮔﭧ ﮐﻠﻨﮓ" ﮨﻮﮔﺌﯽ۔ ﺍﻣﯽ نے ﻓﯿﮑﭩﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻡ ﮐﺮنا شروع کردیا لیکن جب وہ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﮨﻮﮔﺌﯿﮟ ﺗﻮ ﮐﺎﻡ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﻣﯽ ﺑﮩﺖ ﺑﯿﻤﺎﺭ ﮨﯿﮟ ، ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎتیں ، ﺷﺎﻡ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ کہا کہ امی اگر آپ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎئیں ﮔﯽ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﺭﻭﺯﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﻮﻟﻮﮞ ﮔﺎ۔ ﭘﮭﺮ ﺍﻣﯽ ﺭﻭﻧﮯ ﻟﮕﯽ ، کہہ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯿﮟ کہ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﭘﺎﺱ ﭘﯿﺴﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯿﮟ ﺗﻮ ﺭﺍﺕ ﮐﮭﺎﻧﺎ ﮐﯿﺎ ﮐﮭﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ؟ اب تو ﺩﮐﺎﻥ ﻭﺍﻻ ﺍﺩﮬﺎﺭ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ۔ عرصہ ہوا تمہارے چچا ، تایا وغیرہ ﺑﮭﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺁئے۔
ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﻣﯽ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ کہ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﯿﻠﻨﮯ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﻮﮞ ﻋﺼﺮ ﮐﯽ ﻧﻤﺎﺯ ﭘﮍﮬﯽ ﺗﻮ ﻣﺴﺠﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺑﻨﺪﮦ ﭘﯿﺴﮯ ﻣﺎﻧﮓ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﺍﺳﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﺩﮮ ﺭﮨﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﻭﮨﺎﮞ ﺳﺐ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﺩﮬﺮ ﺁﭖ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﮯ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ آﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮭﯽ ﭘﯿﺴﮯ ﻣﻠﯿﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺍﻣﯽ ﮐﻮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﻟﮯﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ۔ لیکن ﺟﺐ میں نے مانگنے کی کوشش کی تو میں نہ تو ہاتھ پھیلا سکا اور نہ ہی میری آواز نکلی ، مجھے ابّو ﯾﺎﺩ ﺁﮔﮱ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ کچھ ﻣﺎﻧﮕﻨﮯ ﺳﮯ ﻣﻨﻊ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺑﻮ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﭩﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﺩﯾﺘﮯ ﺗﮭﮯ ﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﺑﮭﯽ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺎ۔ اب ﺍﮔﺮ ﺑﮭﯿﮏ ﻣﺎﻧﮕﻮﮞ ﮔﺎ ﺗﻮ ﺍﺑﻮ ﺍﻭﺭ ﺧﻔﺎ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ، ﭘﺮ ﭘﯿﺴﮯ نہ ﮨﻮئے ﺗﻮ ﺍﻣﯽ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﭘﺎﺱ ﻧﮩﯿﮟ ﺟﺎئیں ﮔﯽ ﭘﮭﺮ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﻣﺮ ﺟﺎئیں ، پھر میرا کیا ہوگا؟ ﻣﯿﮟ ﮐﮩﺎﮞ ﺟﺎﺅﮞ ﮔﺎ؟

۔
۔

ﺷﺎﯾﺪ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ سننے کی ﮨﻤّﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﯽ۔ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ اپنے آنسو روکے اور اسے ﮔﻠﮯ ﺳﮯ ﻟﮕﺎ ﻟﯿﺎ۔ جیب میں پاکٹ منی کی تھوڑی سی رقم تھی ، ﺳﻮ ﺍﺳﮑﮯ ﮔﮭﺮ گیا ، ﻭﮨﺎﮞ ﺍس کی ﻭﺍﻟﺪﮦ ﺳﮯ ﻣﻼ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﻧﻨﮭﮯ ﺷﯿﺮ ﮐﯽ ﻣﺎﮞ ﮐﻮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ لے کرگئے۔ اس کے بعد ایک طویل کہانی ہے کہ کس طرح میں نے اپنے والد صاحب کو قائل کیا کہ ان کی مستقل مدد کرنی چاہیے۔ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮭﯿﮟ ﺑﮭﯿﮓ ﺭﮨﯽ ﮨﯿﮟ ﺁﻧﺴﻮﺅﮞ ﺳﮯ نہ جاﻧﮯ ﮐﺘﻨﯽ ﮨﯽ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﮐﻠﯿﺎﮞ
ﻣﺠﺒﻮﺭﯼ ﮐﮯ ﭘﺘﮭﺮﻭﮞ ﺗﻠﮯ ﮐﭽﻠﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﻮﮞ ﮔﯽ۔

ﻣﯿﺮﯼ ﺍﻥ ﺗﻤﺎﻡ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﺳﮯ ﮔﺰﺍﺭﺵ ﮨﮯ ﺟﻨﮩﯿﮟ اللہ تعالیٰ ﻧﮯ مناسب ﻣﺎﻝ ﻋﻄﺎ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺁﺯﻣﺎﺋﺶ ﻣﯿﮟ ﮈﺍﻻ ﮨﮯ کہ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﭘﻮﺭﯼ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﮐﻮ ﮨﺎﺗﮫ ﭘﮭﯿﻼﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ نہ ﻣﻠﮯ۔ ﯾﮧ ﺁﭘﮑﺎ ﺍﺣﺴﺎﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﭘﮑﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺭﺷﺘﮯﺩﺍﺭﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﮍﻭﺳﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺣﺎﻟﺖ ﺧﻮﺩ ﺳﻤﺠﮭﺌﮯ۔ ڈھائی فی صد تو فرض ہے، اپنے ہاتھ کھولئے اور کثرت سے صدقہ و خیرات کیجیے۔ میں دروازے پر مانگنے والوں کی بات نہیں کررہا ہوں ، باہر نکلیے اور مستحق لوگوں کو ڈھونڈ کر ان کی مدد کیجیے۔ یقین کیجیے سب کچھ یہیں رہ جائے گا ، سوائے اُس (الباقیات الصالحات) کے جو آپ نے آگے بھیجا۔ ﯾﮧ ﭘﯿﺴﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﻝ ﮐﺴﯽ ﮐﺎﻡ ﮐﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺩﮐﮭﯽ ﺩﻝ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ نہ ﮨﻮ۔ ﻣﯿﮟ ﺁپ کو ﻭﮦ ﺳﮑﻮﻥ ﺍﻭﺭ ﺧﻮﺷﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﺟﻮ ﺳﭽﮯ ﺩﻝ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺎ ﮐﺴﯽ ﺑﺪﻟﮯ ﮐﯽ ﺍﻣﯿﺪ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺩکھ ﺑﺎﻧﭧ ﮐﺮ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺑﭽﭙﻦ ﺑﮩﺖ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺧﺪﺍﺭﺍ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺑﭽﭙﻦ ﺑﭽﺎ ﻟﯿﺠﺌﮯ ﮐﺴﯽ ﮐﮯ ﻣﻮﺗﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻗﯿﻤﺘﯽ ﺁﻧﺴﻮ ﻣﭩﯽ ﺗﮏ نہ ﭘﮩﻨﭽﻨﮯ ﺩﯾﺠﺌﮯ ﻭﺭﻧﮧ ﯾﮧ نمی مٹی تک پہنچنے سے پہلے بہت تیزی سے ﻋﺮﺵ ﺗﮏ جا پہنچتی ﮨﮯ۔ اس سے پہلے کہ
اللہ تعالیٰ کی بے آواز لاٹھی وار کرے ، اٹھیں ﺍﻭﺭ دوسروں کی مدد کریں۔

٭واصف٭

Monday, 25 November 2013

جب وہ (اللہ سبحان تعالٰی) سبب بناتا ہے۔

اس کا نام ڈاکٹر احمد تھا اور وہ سعودی عرب کا معروف طبیب تھا۔ لوگ اس سے مشورہ لینے کے لیے کئی کئی دن تک انتظار کرتے۔ اس کی شہرت بڑھتی چلی گئی۔دارالحکومت میں ایک انٹر نیشنل میڈیکل کانفرنس کا انعقاد ہوا جس میں اسے بھی دعوت دی گئی۔ اس کی خدمات کے پیش نظر فیصلہ ہوا کہ وہ اس کانفرنس میں نہ صرف کلیدی مقالہ پڑھے گا بلکہ اس موقع پر اسے اعزازی شیلڈ اور سرٹیفکیٹ بھی دیا جائے۔ڈاکٹر احمداپنے گھر سے ائیرپورٹ کی طرف روانہ ہوا۔

وہ بڑا خوش اور پُرسکون تھا۔ آج شام اس کی تکریم اور عزت کی جانے والی تھی۔ اس کا سوچ کر وہ اور بھی زیادہ آسودہ ہوگیا۔ ائیر پورٹ پر وہ معمول کی چیکنگ کے بعد فوراً ہی ہوائی جہاز میں سوار ہوگیا۔ اس کی فلائٹ وقت کے مطابق پرواز کر گئی۔ کوئی آدھ پون گھنٹے کے بعد ائیر ہوسٹس نے اعلان کیا ہم معذرت خواہ ہیں کہ طیارے میں فنی خرابی کے باعث ہم قریبی ائیر پورٹ پر اتر رہے ہیں۔ ہمارے پاس اس کے سوا کوئی چارہ کار نہیں ہے۔

فلائٹ بغیر کسی رکاوٹ اور حادثے کے قریبی ائیر پورٹ پر اتر گئی۔ مسافر جہاز سے اتر کر لاؤنج میں چلے گئے۔ ڈاکٹر احمد بھی دیگر مسافروں کے ساتھ طیارے کی فنی خرابی کے درست ہونے کا انتظار کرنے لگے۔تھوڑی دیر کے بعد ائیر پورٹ اتھارٹی نے اعلان کیا:خواتین وحضرات! انجینئر نے بتایا ہے کہ فنی خرابی کے درست ہونے کا فوری طور پر کوئی امکان نہیں ہے۔ لہٰذا مسافروں کے لیے متبادل طیارہ کا انتظام کیا جا رہا ہے۔ یہ طیارہ کب آئے گا ؟کسی کو علم نہ تھا۔ تھوڑی دیر بعد نیا اعلان ہوا کہ متبادل طیارہ کل ہی آسکتا ہے۔ ہم اس زحمت کے لیے معذرت خواہ ہیں۔ اب آپ کو ہوٹل پہنچا دیا جائے گا۔

ڈاکٹر احمدکے لیے یہ اعلان نہایت تکلیف دہ اور پریشان کر دینے والا تھا۔ آج رات تو اس کی زندگی کی نہایت اہم رات تھی۔ وہ کتنے ہفتوں سے اس رات کا منتظر تھا کہ جب اس کی تکریم ہونی تھی۔ وہ کرسی سے اٹھا اور ائیر پورٹ کے اعلی افسر کے پاس جا پہنچا، اپنا تعارف کرایا اور کہا کہ میں انٹر نیشنل لیول کا ڈاکٹر ہوں۔ میرا ایک ایک منٹ قیمتی ہے ۔ مجھے آج رات دارالحکومت میں مقالہ پڑھنا ہے۔ پوری دنیا سے مندوبین اس سیمینار میں شرکت کے لیے آئے ہوئے ہیں اور آپ لوگ ہمیں یہ خبر سنا رہے ہیں کہ متبادل طیارہ ۱۶ گھنٹے بعد آئے گا۔متعلقہ افسر نے اسے جواب دیا: محترم ڈاکٹر صاحب ہم آپ کی عزت اور قدر کرتے ہیں ۔

ہمیں آپ کی اور دیگر مسافروں کی مشکلات کا اندازہ ہے۔ لیکن یہ ہمارے بس کی بات نہیں اور نیا طیارہ فوری طور پر فراہم کرنا میرے بس میں نہیں ہے۔البتہ وہ شہر جہاں آپ کو کانفرنس میں شرکت کے لیے جانا ہے، یہاں سے بذریعہ کار سے صرف تین چار گھنٹے کی مسافت پر ہے۔ اگر آپ کو بہت جلدی ہے تو ائیر پورٹ سے کرایہ پر گاڑی حاصل کریں اور خود ڈرائیو کرتے ہوئے متعلقہ شہر پہنچ جائیں۔ ‘‘

ڈاکٹر احمدلمبی ڈرائیونگ کرنا پسند نہ کرتا تھا۔ مگر اب یہ مجبوری تھی اس کے پاس کوئی متبادل راستہ تھا ہی نہیں۔اس نے متعلقہ آفیسرکے مشورے کوپسند کیا اور ایئر پورٹ سے کار کرایہ پر لے کر متعلقہ شہر کی جانب روانہ ہو گیا۔ ابھی کچھ ہی فاصلہ طے کیاتھا کہ اچانک موسم خراب ہو نا شروع ہو گیا۔آسمان پر گہرے بادل نمو دار ہوئے۔تیز آندھی اس پر مستزادتھی۔ دیکھتے ہی دیکھتے زور دار بارش شروع ہوگئی اور ہر طرف اندھیر ا چھا گیا۔ موسم کی خرابی کی و جہ سے اسے اندازہ ہی نہ ہوا کہ وہ کس سمت جارہا ہے۔ دو گھنٹے تک وہ مسلسل چلتا گیا،بالآخر اسے یقین ہو گیاکہ وہ راستے سے بھٹک چکا ہے۔

اب اسے بھوک اور تھکاوٹ کااحساس بھی بڑی شدت سے ہونے لگا۔اس نے سوچا تھا : تین چار گھنٹے ہی کا سفر تو ہے ، ا س لیے اس نے اپنے ساتھ کھانے پینے کی کوئی چیز بھی نہ لی تھی۔اب اسے کسی ایسے ٹھکانے کی تلاش تھی جہاں سے اسے کھانے پینے کی کوئی چیز مل سکے۔وقت تیزی سے گزرتا رہا تھا۔ چاروں طرف رات کا اندھیرا بھی چھا چکا تھا۔ ایک چھوٹے سے گاؤں کے پاس سے گزرتے ہوئے اس نے غیر شعوری طور پراپنی گاڑی ایک چھوٹے سے گھر کے سامنے روک دی۔

اس کا ہاتھ گھر کے دروازے پر دستک دے رہا تھا جب اندر سے ایک بوڑھی عورت کی نحیف و ناتواں آوازاس کے کانوں میں پڑی جو کہہ رہی تھی:جو بھی ہو اندر آجاؤ دروازہ کھلا ہے۔ ڈاکٹراحمدگھر میں داخل ہو اتو دیکھا کہ ایک بوڑھی عورت متحرک کرسی پر بیٹھی ہے۔ اس نے خاتون سے کہا: اماں! میرے موبائل کی بیٹری ختم ہو چکی ہے، کیا میں اپنا موبائل چارج کر سکتا ہوں؟

بوڑھی عورت مسکرا کر کہنے لگی: میرے بیٹے کون سے فون کی بات کررہے ہو؟ تمھیں معلوم نہیں اس وقت تم کہاں ہو؟ ہما رے ہاں نہ تو بجلی ہے نہ ٹیلی فون،یہ تو ایک چھوٹا سا گائوں ہے، جہاں شہری سہولتوں کاکوئی تصور نہیں ہے پھر اس نے مزید کہا! میرے بیٹے وہ سامنے میز پر چائے اور کھانا رکھاہے۔لگتا ہے کہ تم بھوکے اور پیاسے ہو۔راستہ بھٹک گئے ہو۔تم پہلے کھانا لو پھر بات کریںگے۔ لگتا ہے تم خاصا طویل فاصلہ طے کر کے آئے ہو۔ ڈاکٹر احمدنے اس بوڑھی خاتون کا شکریہ ادا کیا اور کھانے پر ٹوٹ پڑا ۔سفر کی تھکاوٹ سے اسے شدید بھوک لگ رہی تھی ۔اچانک خاتون کی کرسی کے ساتھ والی چارپائی پر حرکت ہوئی اور ایک معصوم نے رونا شروع کر دیا۔خا تون نے اس بچے کوتھپک کر سلایا اور اسے دعائیں دینا شروع کیں۔وہ اس بچے کی صحت اور سلامتی کے لیے لمبی لمبی دعائیں کر رہی تھی۔

ڈاکٹراحمدنے کھانا کھایا اور بوڑھی اماں سے کہنے لگا: اماں جان! آپ نے اپنے اخلاق ‘کرم اور میز بانی سے میرا دل جیت لیا ہے۔آ پ لمبی لمبی دعائیں مانگ رہی ہیں ۔ امید ہے کہ اللہ تعالی آپ کی دعائیں ضرور قبول کرے گا۔ ’’میرے بیٹے! وہ بوڑھی گویا ہوئی۔‘‘ میرے اللہ نے میری تمام دعائیں سنی اور قبول کی ہیں۔ہا ں بس ایک دعا باقی ہے جو میرے ضعفِ ایمان کی وجہ سے پور ی نہیں ہوئی ۔تم تو مسافرہو، دعا کرو کہ وہ بھی قبول ہو جائے۔

ڈاکٹر احمدکہنے لگا: اماں جان وہ کونسی دعا ہے جو قبول نہیں ہوئی۔آپ مجھے اپنا کام بتائیں میں آ پ کے بیٹے کی طرح ہوں ۔اللہ نے چاہا تو میں اسے ضرورکروں گا۔آپ کی جو مدد میرے بس میں ہو گی ضرور کروں گا۔ خاتون کہنے لگی: میرے عزیز بیٹے !وہ دعا اور خواہش میرے اپنے لیے نہیںبلکہ اس یتیم بچے کے لیے ہے جو میرا پوتا ہے۔اس کے ما ں باپ کچھ عرصہ پہلے فوت ہو چکے ہیں۔ اسے ہڈیوں کی ایک بیما ری ہے جس کی وجہ سے چلنے پھرنے سے معذو ر ہے۔میں نے قریبی حکیموں، مہمانوں سے اس کے بڑے علاج کرائے ہیں مگر تمام اطباء اس کے علاج سے عاجز آ گئے ہیں ۔

لوگو ں نے مشورہ دیا ہے کہ اس ملک میں ایک ہی ڈا کٹر ہے جو اس ہڈیوں کے علاج کا ما ہر ہے، اس کی شہرت دور دور تک ہے ۔ وہ بڑا مانا ہوا سرجن ہے۔ وہی اس کا علاج کر سکتاہے، مگر وہ تو یہاں سے بہت دو ر رہتا ہے پھر سنا ہے بہت مہنگا بھی ہے۔ اس تک پہنچنا کوئی آسان کام تو نہیں ہے۔ تم میری حالت تو دیکھ ہی رہے ہو،میں بوڑھی جان ہوں۔کسی وقت بھی بلاوا آ سکتا ہے۔مجھے ڈر ہے کہ میرے بعد اس بچے کی نگہداشت کرنے والا کوئی نہیں ہو گا۔میں ہر وقت اللہ تعالیٰ سے دعا کرتی ہوں کہ وہ کوئی سبب پیدا کر دے کہ اس بچے کا اس ڈاکٹر سے علاج ہو سکے۔ عین ممکن ہے کہ اس یتیم بچے کو شفاء اسی ڈاکٹر کے ہاتھوں مل جائے۔

ڈاکٹر احمداپنے جذبات پر قابو نہ رکھ سکا، اس نے رندھی ہوئی آواز میں کہا: اماں جان! میرا طیارہ خراب ہوا، راستے میں اُترنا پڑا کار کرائے پر لی، خوب طوفان آیا‘ آندھی او ر بارش آئی، راستہ بھول گیا۔ اللہ تعالیٰ نے مجھے آپ کے گھر زبر دستی بھجوا دیا۔اما ں آپ کی آخری دعا بھی قبول ہو چکی ہے۔اللہ رب العزت نے ایسے اسباب مہیا کر دیے ہیں کہ وہ ہڈیوں کا بڑا ڈاکٹر خود چل کر آپ کے گھر آگیا ہے۔ اب میں آپ کے پوتے کا علاج کروں گا۔‘‘

جب اللہ تعالی اپنے کسی بندے کی سنتا ہے تو پھر اس کوپورا کرنے کے لیے اسباب بھی خود ہی مہیا فرما دیتا ہے۔کائنات کی ساری مخلوق چاہے وہ جاندار ہو یا بے جان، اللہ کے حکم اور اس کی مشیّت کی پابند ہے۔ اس واقعے میں آپ دیکھ سکتے ہیں کہ کس طرح اللہ تعالی نے زمین وآسمان کی مختلف قوتوں کو کام میں لا کر بوڑھی اماں کی دعا کو پورا کرنے میں لگا دیا۔

ارشاد باری تعالی ہے:

أَمَّنْ يُجِيبُ الْمُضْطَرَّ إِذَا دَعَاهُ وَيَكْشِفُ السُّوءَ وَيَجْعَلُكُمْ خُلَفَاءَ الْأَرْضِ ۗ أَإِلَٰهٌ مَعَ اللَّهِ ۚ قَلِيلًا مَا تَذَكَّرُونَ

بھلا کون بیقرار کی التجا قبول کرتا ہے۔ جب وہ اس سے دعا کرتا ہے اور (کون اس کی) تکلیف کو دور کرتا ہے اور (کون) تم کو زمین میں (اگلوں کا) جانشین بناتا ہے (یہ سب کچھ خدا کرتا ہے) تو کیا اللہ کے ساتھ کوئی اور معبود بھی ہے (ہرگز نہیں مگر) تم بہت کم غور کرتے ہو.
سورة النمل - الآية 62
شکریہ
۔۔۔ مس نور۔۔۔

لڑکیوں کے لئے ایک اچھی بیوی بننے کا نسخہ-

 
 
لڑکیوں کے لئے ایک اچھی بیوی بننے کا نسخہ ...........!


یہ پوسٹ ایک طرف جہاں عورتوں کو اچھی بیوی بننے کا سبق دے گی وہاں مردوں کو بھی اپنے بلاوجہ کے غصے کو کنٹرول کرنا اور اپنی بیویوں کے ساتھ اچھا سلوک کرنا سکھائے گی ان شاء الله
_______________________________________________

کسی جگہ ایک بوڑھی مگر سمجھدار اور دانا عورت رہتی تھی جس کا خاوند اُس سے بہت ہی پیار کرتا تھا۔

دونوں میں محبت اس قدر شدید تھی کہ اُسکا خاوند اُس کیلئے محبت بھری شاعری کرتا اور اُس کیلئے شعر کہتا تھا۔

عمر جتنی زیادہ ہورہی تھی، باہمی محبت اور خوشی اُتنی ہی زیادہ بڑھ رہی تھی۔

جب اس عورت سے اُس کی دائمی محبت اور خوشیوں بھری زندگی کا راز پوچھا گیا

کہ آیا وہ ایک بہت ماہر اور اچھا کھانا پکانے والی ہے؟

یا وہ بہت ہی حسین و جمیل اور خوبصورت ہے؟

یا اس محبت کا کوئی اور راز ہے؟

تو عورت نے یوں جواب دیا کہ

خوشیوں بھری زندگی کے اسباب اللہ سبحانہ و تعالیٰ کی ذات کے بعد خود

عورت کے اپنے ہاتھوں میں ہے۔ اگر عورت چاہے تو وہ اپنے گھر کو جنت کی

چھاؤں بنا سکتی ہے اوراگر یہی عورت چاہے تو اپنے گھر کو جہنم کی دہکتی

ہوئی آگ سےبھی بھر سکتی ہے۔

مت سوچیئے کہ مال و دولت خوشیوں کا ایک سبب ہے۔ تاریخ کتنی مالدار

عورتوں کی کہانیوں سے بھری پڑی ہے جن کے خاوند اُن کو اُنکے مال متاب

سمیت چھوڑ کر کنارہ کش ہو گئے۔

اچھے کھانا پکانا بھی کوئی خوبی نہیں ہے، سارا دن کچن میں رہ کرمزے مزے کے کھانے پکا کر بھی عورتیں خاوند کے غلط معاملہ کی شکایت کرتی نظر آتی ہیں اور خاوند کی نظروں میں اپنی کوئی عزت نہیں بنا پاتیں۔

تو پھر آپ ہی بتا دیں اس پُرسعادت اور خوشیوں بھری زندگی کا کیا راز ہے؟

اور آپ اپنے اورخاوند کے درمیان پیش آنے والے مسائل اور مشاکل سے کس طرح نپٹا کرتی تھیں؟
------------------------------------------------------
اُس نے جواب دیا: جس وقت میرا خاوند غصے میں آتا تھا اور بلا شبہ میرا خاوند بہت ہی غصیلا آدمی تھا، میں اُن لمحات میں ( نہایت ہی احترام کے ساتھ) مکمل خاموشی اختیار کر لیا کرتی تھی۔ یہاں ایک بات واضح کر دوں کہ احترام کےساتھ خاموشی کا یہ مطلب ہے کہ آنکھوں سے حقارت اور نفرت نا جھلک رہی ہو اور نا ہی مذاق اور سخریہ پن دکھائی دے رہا ہو۔ آدمی بہت عقلمند ہوتا ہے ایسی صورتحال اور ایسے معاملے کو بھانپ لیا کرتا ہے۔

اچھا تو آپ ایسی صورتحال میں کمرے سے باہر کیوں نہیں چلی جایا کرتی تھیں؟
------------------------------------------------------
اُس نے کہا: خبردار ایسی حرکت مت کرنا، اس سے تو ایسا لگے گا تم اُس سے فرار چاہتی ہو اور اُسکا نقطہ نظر نہیں جاننا چاہتی، خاموشی تو ضروری ہے ہی، اس کے ساتھ ساتھ خاوند جو کچھ کہے اُسے نا صرف یہ کہ سُننا بلکہ اُس کے کہے سے اتفاق کرنا بھی اُتنا ہی اشد ضروری ہے۔ میرا خاوند جب اپنی باتیں پوری کر لیتا تو میں کمرے سے باہر چلی جایا کرتی تھی، کیونکہ اس ساری چیخ و پکار اور شور و شرابے والی گفتگو کے بعد میں سمجھتی تھی کہ اُسے آرام کی ضرورت ہوتی تھی۔ کمرے سے باہر نکل کر میں اپنے روزمرہ کے گھریلو کام کاج میں مشغول ہو جاتی تھی، بچوں کے کام کرتی، کھانا پکانے اور کپڑے دھونے میں وقت گزارتی اور اپنے دماغ کو اُس جنگ سے دور بھگانے کی کوشش کرتی جو میری خاوند نے میرے ساتھ کی تھی۔

تو آپ اس ماحول میں کیا کرتی تھیں؟ کئی دنوں کیلئے لا تعلقی اختیار کرلینا اور خاوند سے ہفتہ دس دن کیلئے بول چال چھوڑ دینا وغیرہ؟
------------------------------------------------------
اُس نے کہا: نہیں، ہرگز نہیں، بول چال چھوڑ دینے کی عادت انتہائی گھٹیا فعل اور خاوند کے ساتھ تعلقات کو بگاڑنے کیلئے دو رُخی تلوار کی مانند ہے۔ اگر تم اپنے خاوند سے بولنا چھوڑ دیتی ہو تو ہو سکتا ہے شروع شروع میں اُس کیلئے یہ بہت ہی تکلیف دہ عمل ہو۔ شروع میں وہ تم سے بولنا چاہے گا اور بولنے کی کوشش بھی کرے گا۔ لیکن جس طرح دن گزرتے جائیں گے وہ اِس کا عادی ہوتا چلا جائے گا۔ تم ایک ہفتہ کیلئے بولنا چھوڑو گی تو اُس میں تم سے دو ہفتوں تک نا بولنے کی استعداد آ جائے گی اور ہو سکتا ہے کہ تمہارے بغیر بھی رہنا سیکھ لے۔ خاوند کو ایسی عادت ڈال دو کہ تمہارے بغیر اپنا دم بھی گھٹتا ہوا محسوس کرے گویا تم اُس کیلئے آکسیجن کی مانند ہو اور تم وہ پانی ہو جس کو پی کر وہ زندہ رہ رہا ہے۔اگر ہوا بننا ہے تو ٹھنڈی اور لطیف ہوا بنو نا کہ گرد آلود اور تیز آندھی۔

اُس کے بعد آپ کیا کیا کرتی تھیں؟
--------------------------------------
اُس عورت نے کہا: میں دو گھنٹوں کے بعد یا دو سے کچھ زیادہ گھنٹوں کے بعد جوس کا ایک گلاس یا پھر گرم چائے کا یک کپ بنا کر اُس کے پاس جاتی، اور اُسے نہایت ہی سلیقے سے کہتی، لیجیئے چائے پیجیئے۔ مجھے یقین ہوتا تھا کہ وہ اس لمحے اس چائے یا جوس کا متمنی ہوتا تھا۔ میرا یہ عمل اور اپنے خاوند کے ساتھ گفتگو اسطرح ہوتی تھی کہ گویا ہمارے درمیان کوئی غصے یا لڑائی والی بات ہوئی ہی نہیں۔

جبکہ اب میرا خاوند ہی مجھ سے اصرار کر کے بار بار پوچھتا تھا کہ کیا میں اُس سے ناراض تو نہیں ہوں۔جبکہ میرا ہر بار اُس سے یہی جواب ہوتا تھا کہ نہیں میں تو ہرگز ناراض نہیں ہوں۔ اسکے بعد وہ ہمیشہ اپنے درشت رویئے کی معذرت کرتا تھا اور مجھ سے گھنٹوں پیار بھری باتیں کرتا تھا۔

تو کیا آپ اُس کی ان پیار بھری باتوں پر یقین کر لیتی تھیں؟
--------------------------------------------------------------
ہاں، بالکل، میں اُن باتوں پر بالکل یقین کرتی تھی۔ میں جاہل نہیں ہوں۔

کیا تم یہ کہنا چاہتی ہو کہ میں اپنے خاوند کی اُن باتوں پر تو یقین کر لوں جو وہ مجھ سے غصے میں کہہ ڈالتا تھا اور اُن باتوں پر یقین نا کروں جو وہ مجھے پر سکون حالت میں کرتا تھا؟ تم مجھ سے کیونکر منوانا چاہتی ہو کہ میں اُسکی غصے کی حالت میں کہی ہوئی باتوں پر یقین کرلیا کروں؟

تو پھر آپکی عزت اور عزت نفس کہاں گئی؟
---------------------------------------------------
کاہے کی عزت اور کونسی عزت نفس؟ کیا عزت اسی کا نام ہے تم غصے میں آئے ہوئے ایک شخص کی تلخ و ترش باتوں پر تو یقین کرکے اُسے اپنی عزت نفس کا مسئلہ بنا لومگر اُس کی اُن باتوں کو کوئی اہمیت نا دو جو وہ تمہیں پیار بھرے اور پر سکون ماحول میں کہہ رہا ہے!

میں فوراً ہی اُن غصے کی حالت میں دی ہوئی گالیوں اور تلخ و ترش باتوں کو بھلا کر اُنکی محبت بھری اور مفید باتوں کو غور سے سنتی تھی۔

جی ہاں،
خوشگوار اور محبت بھری زندگی کا راز عورت کی عقل کے اندر موجود تو ہے

مگر یہ راز اُسکی زبان سے بندھا ہوا ہے۔

جس انسان کو اپنی زبان پر کنٹرول کرنا آ گیا سمجھو اس نے سکھی زندگی کا راز پا لیا —

Wednesday, 20 November 2013

•••••• پہلی محبت ••••••

کچھ عمر کی
پہلی منزل تھی
••••••
کچھ رستے تھے
انجان بہت
••••••
کچھ ہم بھی
پاگل تھے لیکن
••••••
کچھ وہ بھی تھے
نادان بہت
••••••
کچھ اس نے بھی
نا سمجھایا
••••••
یہ پیار نہیں
آسان بہت
••••••
آخر ہم نے
بھی کھیل لیا
••••••
جس کھیل میں تھے
نقصان بہت

Sunday, 17 November 2013

’’حملہ ہو چکا ہے‘‘

یہ ۱۹۵۹ء کی بات ہے ۔میں انگریزی ادب میں آنرز کر رہا تھا۔ سندھ یونیورسٹی میں ہمارے ڈیپارٹمنٹ کے سربراہ پروفیسرجمیل واسطی مرحوم تھے، جو پنجاب سے ریٹائرمنٹ کے بعد کنٹریکٹ پر حیدرآباد آئے تھے۔ ہماری کلاس میں تقریباً بیس سٹوڈنٹ تھے۔ان میں چھ کے قریب طالبات تھیں۔ اس زمانہ میں طالبات انگریزی ادب فیشن کے طور پر پڑھا کرتی تھیں۔ ہماری کلاس نے پکنک کاایک پروگرام بنایا، لیکن اس پراختلاف ہوگیا کہ لڑکیاں اور لڑکے اکٹھے پکنک منانے جائیں یا الگ الگ؟ یہ معاملہ پروفیسر جمیل واسطی کے علم میں آیاتو انہوں نے رائے دی کہ الگ الگ پکنک کرنا زیادہ مناسب ہوگا۔ "مگریہاں تومخلوط تعلیم ہے۔ واسطی صاحب!" ایک لڑکی نے اٹھ کراحتجاج بھری آواز میں کہا۔ "میں نے کب کہا کہ میں مخلوط تعلیم کاحامی ہوں؟" واسطی مرحوم بولے۔ "سر! یہ کیسی بات کر رہے ہیں آپ؟ زمانہ بہت ترقی کر چکا ہے۔" وہ بولی۔ واسطی صاحب نے گھوم کرلڑکی کی طرف دیکھا جو ایک معروف، متمول اور فیشن ایبل خاندان سے تعلق رکھتی تھی۔پھرانہوں نے میری طرف دیکھا اور کہا: غلام اکبر! تمہاری جیب میں ایک چونّی ہوگی؟ اس عجیب وغریب سوال پر میں چ...ونک پڑا اورجلدی سے جیب میں ہاتھ ڈالا۔ واسطی صاحب فوراً ہی بولے: دروازے سے باہر جا کر چونی کاریڈار میں رکھ دو۔ پوری کلاس حیرت زدہ تھی۔ میں بھی حیران ہوکر دروازے کی طرف مڑا تو واسطی صاحب بولے: سمجھ لوکہ تم چونّی کلاس کے باہر رکھ چکے ہو،اب بیٹھ جاؤ۔ پھر واسطی صاحب اس لڑکی کی طرف مڑے اور بولے: جب ہم کلاس ختم کر کے باہر نکلیں گے تو کیا وہ چونی وہاں موجود ہو گی؟ لڑکی بدحواس سی ہو گئی۔ پھرسنبھل کر بولی: ہوسکتاہے کہ اگر کسی کی نظرپڑے تواٹھا لے۔ اس جواب پرواسطی صاحب مسکرائے اورسب سے مخاطب ہوکر بولے :دیکھ لیں کہ جن لوگوں پرایک چونّی کے معاملے پربھروسہ نہیں کیا جا سکتا، وہ لڑکیوں کے معاملے میں کس قدرشریف ہیں؟ حالانکہ چونّی بچاری تولپ سٹک بھی نہیں لگاتی!! واسطی صاحب کی اس بات پرپوری کلاس کو سانپ سا سونگھ گیا۔ میں آج تک وہ بات نہیں بھولا۔ اس کا مطلب یہ نہیں کہ میں دقیانوسی سوچ رکھتاہوں یا واسطی صاحب بہت زیادہ قدامت پسند سوچ کے حامل تھے۔ لیکن کیا اس بات میں کچھ سچ ایسے نہیں چھپے ہوئے جن کاتعلق براہ راست انسان کی فطرت اوران جبلتوں سے ہے جنہیں سدھایا اور سدھارا نہ جائے توان کی رو میں تہذیب وتمدن کے تمام تقاضے بہہ جایا کرتے ہیں؟
روزنامہ نوائے وقت کے کالم نگارجناب غلام اکبرصاحب کا کالم’’حملہ ہو چکا ہے‘‘ ******************************************

سیاہ دلی نا چھپی سیاہ لباس میں۔ (10 محرم 2013 راولپنڈی)

سیاہ دلی نا چھپی سیاہ لباس میں
یزیدیت نے دکھلایا ہے مکروہ چہرہ
 
 
افسوس ناک واقعہ اور دل دھلا دینے والی حقیقت۔ اندر کی سیاہی کو سیاہ لباس بھی نا چھپا سکا۔  یہ حادثہ اتنا حادثاتی تھا کہ اس کے لیئے اسلحہ اور پیٹرول کے کین پہلے سے تیار کیئے ہوئے تھے۔ مسجد ومدرسہ اور بازار کی دکانیں پہلے سے لسٹ میں شامل تھیں۔ میڈیا کو بھی بریفنگ تھی کہ خاموشی کے ساتھ اپنے باپ ٹنڈولکر کے ساتھ اپنی والدہ اور بہنوں کے سکینڈل چلاتے رہنا  تاکہ بے ضمیر سوئی ہوئی عوام کو جاگنے کا کوئی موقع نا ملے۔
 
لیکن بات یہیں پر ختم نہیں ہوتی۔ بلکہ یہ سب کچھ کرنے والے یہ مت سوچیں کے ان کو فتح ہوئی اور کوئی معر کہ جیت کر وہ فاتح بن گئے۔ نہیں یہ میدان جنگ نہیں جہاں لوگ لاشیں سمیٹ کر اپنے شہدا کو لیکر رخصت ہوگئے۔ آگ تو لگی ہے ابھی چنگاریاں اٹھی ہیں۔ ساری عوام مر گئی بے ضمیر ہوگئی، لیکن جن کے شہید ہوئے ہیں ، جن کو بے قصور چھریوں اور تلواروں کی نظر کیا گیا وہ ابھی زندہ ہیں۔
 
لوگ کہتے ہیں خود کش کیسے بنتے ہیں، کیسے کوئی یہ جانتے ہوئے بھی کہ ایک بٹن دبا کر اس کے ہزاروں ٹکڑئے ہو جائیں گے۔ پھر بھی وہ اس آگ میں کود جاتا ہے۔
 
تو ان کو جواب سمجھ آ جانا چاہیئے۔
 
ڈرون اٹیک ہو یا دھشت گردی کے نام پر پاک آرمی کا آپریشن یا پھر سیاہ لباس میں دھشت گرد جو مظلومین کے غم کے بہانے، بھیڑ کی کھال پہنے بھیڑیے ہوں۔ جب ظلم اپنی حدوں کو چھوتا ہے تو مرنے والے کے ساتھ ساتھ اس کے اپنے بھی مر جاتے ہیں۔
 
اور جو پہلے ہی مرا ہوا ہو اس کو مزید مرنے سے کون روک سکتا ہے۔
 
اگر انصاف نا ہوا، اگر انصاف نا ہوا
 
تو یاد رکھیں کہ خود کشوں کی ایک نئی کھیپ جلد مارکیٹ میں آنے والی ہے ۔ جو ہاتھ کے بدلے ہاتھ، ، بازو کے بدلے بازو، خون کے بدلے خون والا معاملہ ہوگا۔
 
اینٹ سے اینٹ بجے گی اور پھر کچھ نام نہاد معصومین اور مظلومین  چاہے وہ اس واقعہ میں شامل تھے یا نا تھے۔ سب ایک ہی چکی میں پسیں گے۔ پھر نا سنی بچیں گے نا شیعہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کیوں کہ بم کی کوئی آنکھیں نہیں ہوتیں اور کوئی معیار مقرر ہوتا ہے کہ کس کو مرنا ہے اور کس کو نہیں۔
 
ایسی ہی ناانصافیاں اور نظام کی بے قاعدگیاں معاشرے میں ایسے لوگ پیدا کرتی ہیں جن کو دھشت گرد کہہ کر بہت آرام سے بری الزمہ نہیں ہوا جا سکتا۔ اور جس کا خمیازہ ساری قوم ادا کرتی ہے۔
 
 ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔افسوس صد افسوس۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Sunday, 10 November 2013

پردیس میں تمہاری یادیں:::::::: 10-11-2013

تہماری چوڑیاں مجھ کو
بہت بھاتی ہیں
کہ جب یہ چھن چھناتی ہیں
میرے دل کی دھڑکن کو
یہ بڑھاتی ہیں
گھر میں جب کبھی بھی تم
کوئی کام کرتی ہو
میں جاگتے ، سوتے
اس چھن چھناہٹ میں
تہمیں محسوس کرتا ہوں
پھر مسکراتا ہوں
تمہیں آواز دیتا ہوں
اور بلاتا ہوں
تہماری چوڑیا ں مجھ کو
بہت بھاتی ہیں!
 
تمہارے کان کی بالی
بہت گدگداتی ہے
کہ جب میرے سینے پہ
چہرہ رکھ کے سوتی ہو
تمہارے کان کی بالی
جو یوں سرسراتی ہے
چمکتی ہے محبت سے
دلوں کے گیت گاتی ہے
تہمارے کان کی بالی
بہت گد گداتی ہے
تمھارے ناک کا کوکا
بہت چمچماتا ہے
کہ جب اندھیرے کمرے میں
خامشی سانسیں لیتی ہے
سانسیں رقص کرتی ہیں
وہ بوسہ تمہارے گالوں کا
جو دل کو گدگدا تا ہے
اسی لمحے اندھیرے میں
تمہارے ناک کا کوکا
بہت چمچماتا ہے
تمھارے رخسار کی لالی
دل کو لبھاتی ہے
کہ جب تمہارے کانوں میں
میری آواز آتی ہے
یہ لالی شفق کے رنگوں  سے
بھر سی جاتی ہے
نا جانے کس قوس کے
رنگ لیکر آتی ہے
قزاح بن جاتی ہے
اور امڈ امڈ آتی ہے
تہمارے گالوں کی لالی
دل کو لبھاتی ہے
تہماری آنکھ کا کجلا
بہت ہی ستاتا ہے
کہ جب میں لوٹ آتا ہوں
وہ رخصت ہونے کا لمحہ
تمہارا سسکیاں لینا
چپکنا میرے سینے سے
میری بازو کو پکڑ کر
بے ساختہ رونا،
جدائی کے وہ آنسو
تہماری آنکھوں سے نکل کر
میرے دل میں بہتے ہیں
تہمارے کاجل کو جب بھی
بے ربط کرتے ہیں ،
آنکھوں سے بہاتے ہیں
مجھے ہر سانس میں میری
کرچی کرچی کرتے ہیں،
مجھے یوں توڑ جاتے ہیں،
تہماری آنکھ کا کجلا
بہت ہی ستاتا ہے
بہت ہی ستاتا ہے
قلم کار:::::::::: راشد ادریس رانا::::::
پردیس میں تمہاری یادیں::::::::::::::: 10-11-2013

Monday, 4 November 2013

سیلف میڈ لوگوں کا المیہ::::

روشنی مزاجوں کا کیا عجب مقدر ہے
زندگی کے رستے میں ۔ ۔ بچھنے والے کانٹوں کو 
راہ سے ہٹانے میں 
ایک ایک تنکے سے آشیاں بنانے میں 
خوشبوئیں پکڑنے میں ۔ ۔ گلستاں سجانے میں 
عمر کاٹ دیتے ہیں 
عمر کاٹ دیتے ہیں 
اور اپنے حصے کے پھول بانٹ دیتے ہیں 
کیسی کیسی خواہش کو قتل کرتے جاتے ہیں 
درگزر کے گلشن میں ابر بن کے رہتے ہیں 
صبر کے سمندر میں ۔ ۔ کشتیاں چلاتے ہیں 
 
 
یہ نہیں کہ ان کو اس روز و شب کی کاہش کا 
کچھ صلہ نہیں ملتا 
مرنے والی آسوں کا ۔ ۔ خون بہا نہیں ملتا 

زندگی کے دامن میں ۔ ۔ جس قدر بھی خوشیاں ہیں 
سب ہی ہاتھ آتی ہیں 
سب ہی مل بھی جاتی ہیں 
وقت پر نہیں ملتیں ۔ ۔ وقت پر نہیں آتیں 

یعنی ان کو محنت کا اجر مل تو جاتا ھے 
لیکن اس طرح جیسے 
قرض کی رقم کوئی قسط قسط ہو جائے 
اصل جو عبارت ہو ۔ ۔ پسِ نوشت ہو جائے 

فصلِ گُل کے آخر میں پھول ان کے کھلتے ہیں 
ان کے صحن میں سورج  دیر سے نکلتے ہیں

امجد اسلام امجد

نسخہ ۔۔۔۔۔ جاوید چودھری(روزنامہ ایکسپریس۔۔۔ ستمبر2013،22)

نسخہ ۔۔۔۔۔ جاوید چودھری
(روزنامہ ایکسپریس۔۔۔ ستمبر2013،22)
 
" لومیں تمہیں انسان کو بندہ بنانے کا نسخہ بتاتا ہوں۔ اپنی خواہشوں کو کبھی اپنے قدموں سے آگے نہ نکلنے دو،جو مل گیا اس  پر شکر کرو،جو چھن گیا اس پرافسوس نہ کرو،جو مانگ لے اس کو دے دو،جو بھول جائے اسے بھول جاؤ،دُنیا میں بے سامان آئے تھے،بے سامان واپس جاؤ گے،سامان جمع نہ کرو،ہجوم سے پرہیز کرو،تنہائی کو ساتھی بناؤ،"مفتی ہو تب بھی فتوی جاری نہ کرو"،جسے خدا ڈھیل دے رہا ہو اس کا کبھی احتساب نہ کرو،بلاضرورت سچ فساد ہوتا ہے،کوئی پوچھے تو سچ بولو،نہ پوچھے تو چپ رہو،لوگ لذت ہوتے ہیں اوردُنیا کی تمام لذتوں کا انجام برا ہوتا ہے،زندگی میں جب خوشی اور سکون کم ہو جائے تو سیر پر نکل جاؤ،تمہیں راستے میں سکون بھی ملے گا اورخوشی بھی ،دینے میں خوشی ہے ،وصول کرنے میں غم ،دولت کو روکو گے تو خود بھی رُک جاؤ گے ،چوروں میں رہو گے تو چور ہو جاؤ گے ،سادھوؤں میں بیٹھو گے تو اندر کا سادھو جاگ جائے گا ،اللہ راضی رہے گا تو جگ راضی رہے گا ،وہ ناراض ہو گا تو نعمتوں سے خوشبو اُڑ جائے گی،تم جب عزیزوں،رشتے داروں،اولاد اور دوستوں سےچڑنے لگو تو جان لو اللہ تم سے ناراض ہے اور تم جب اپنے دل میں دشمنوں کے لیے رحم محسوس کرنے لگو تو سمجھ لو تمہارا خالق تم سے راضی ہے اور ہجرت کرنے والا کبھی گھاٹے میں نہیں رہتا " بابے نے ایک لمبی سانس لی ،اس نے میری چھتری کھولی ،میرے سر پر رکھی اور فرمایا "جاؤ تم پر رحمتوں کی یہ چھتری آخری سانس تک رہے گی ،بس ایک چیز کا دھیان رکھنا کسی کو خود نہ چھوڑنا،دوسرے کو فیصلے کا موقع دینا،" یہ اللہ کی سنت ہے،اللہ کبھی اپنی مخلوق کو تنہا نہیں چھوڑتا،مخلوق اللہ کو چھوڑتی ہے اور دھیان رکھنا ،جو جا رہا ہو اسے جانے دینا مگر جو واپس آرہا ہو اس پر کبھی اپنا دروازہ بند نہ کرنا،یہ بھی اللہ کی عادت ہے،اللہ واپس آنے والوں کے لیے ہمیشہ اپنا دروازہ کھلا رکھتا ہے،تم یہ کرتے رہنا،تمہارے دروازے پرمیلہ لگا رہے گا"۔

Monday, 21 October 2013

کوئی اج چلیا، کوئی کل چلیا



----:::::پانی کے ذریعہ علاج:::::----


     دردِ سر ‘ بلڈ پریشر‘ لقوہ‘ دمہ‘ کھانسی‘ جگر کے امراض‘ بلڈ کولیسٹرول‘ بلغم‘ آرتھرائٹس‘ مینن جائنٹس‘ استخاضہ‘ ٹی بی‘ بے ہوشی‘ مروڑ‘ تیزابیت‘ قبض‘ ذیابیطس‘ گیس ٹربل ‘ آنکھ کے امراض‘ بچہ دانی کا کینسر‘ پیشاب کی بیماری‘ ناک و گلے کے امراض۔
پانی پینے کا طریقہ:
 بغیر منہ دھوئے اور کلی کئے‘ نہار منہ 1250ملی لیٹر یعنی چار بڑے گلاس پانی ایک ساتھ پی جائیں اب 45 منٹ تک کچھ بھی نہ کھائیں پئیں۔
ہاں اب منجن‘ کلی وغیرہ میں حرج نہیں۔ یہ علاج شروع کرنے کے بعد کھانا کھانے کے دو گھنٹے بعد ہی پانی پئیں۔ اور سونے سے آدھا گھنٹہ قبل کچھ نہ کھائیں‘ اگر ابتدا میں چارگلاس نہیں پی سکتے تو ایک یادو گلاس سے شروع کریں۔ آہستہ آہستہ بڑھا کر چار گلاس کر دیں۔ مریض تندرست رہنے کےلئے یہ طریقہ علاج اپنائیں۔
 
 اطباءکے بقول اس علاج سے مندرجہ ذیل امراض بتائی ہوئی مدت میں ٹھیک ہو سکتے ہیں۔
 قبض دو دن‘
 گیس کے امراض دو دن‘
 ہائی بلڈ پریشر ایک ماہ‘
 ذیابیطس ایک ہفتہ‘
 کینسر ایک ماہ‘
 ٹی بی تین ماہ
 
 نوٹ :۔ چار گلاس بڑے پانی کے پی جانے سے کوئی نقصان  نہیں ہوتا ہاں شکم سیری ہو جائے گی اور انشاءاللہ پون گھنٹے کے بعد بھوک لگے گی۔ ابتدا میں تین روز ہو سکتا ہے ‘ چند بار پیشاب جلدی آئے اس کے بعد انشاءاللہ حسب معمول آئے گا۔

سنہرے موتی :::::::::: حضرت شیخ بایزید بسطامی رحمة اللہ علیہ::::::::::

حضرت شیخ بایزید بسطامی رحمة اللہ علیہ نے فرمایا کہ میں ایک سفر میں تھا کہ میرے دل میں ندا سنائی دی، اے بایزید دَرِسمعان کی طرف چل اور عیسائیوں کے ساتھ ان کی عید اور قربانی میں حاضر ہو۔ اس میں ایک شاندار واقعہ ہوگا۔ تو میں نے اعوذباللہ پڑھا اور کہا کہ پھر اس وسوسہ کو دوبارہ نہیں آنے دوں گا۔ جب رات ہوئی تو خواب میں ہاتف کی وہی آواز سنی۔ جب بیدار ہوا تو بدن میں لرزہ تھا۔ پھر سوچنے لگا کہ اس بارے میں فرمانبرداری کروں یا نہ تو پھر میرے باطن سے ندا آئی کہ ڈرو مت کہ تم ہمارے نزدیک اولیاء اخیار میں سے ہو اور ابرار کے دفتر میں لکھے ہوئے ہو لیکن راہبوں کا لباس پہن لو اور ہماری رضا کے لئے زنّار باندھ لو۔ آپ پر کوئی گناہ یا انکار نہیں ہوگا۔ حضرت شیخ فرماتے ہیں کہ صبح سویرے میں نے عیسائیوں کا لباس پہنا زنار کو باندھا اور دَیر سمعان پہنچ گیا۔ وہ ان کی عید کا دن تھا مختلف علاقوں کے راہب دیر سمعان کے بڑے راہب سے فیض حاصل کرنے اور ارشادات سننے کے لئے حاضر ہو رہے تھے میں بھی راہب کے لباس میں ان کی مجلس میں جا بیٹھا۔ جب بڑا راہب آکر ممبر پر بیٹھا تو سب خاموش ہو گئے۔ بڑے راہب نے جب بولنے کا ارادہ کیا تو اس کا ممبر لرزنے لگا اور کچھ بول نہ سکا گویا اس کا منہ کسی نے لگام سے بند کر رکھا ہے توسب راہب اور علماء کہنے لگے اے مرشد ربّانی کون سی چیز آپ کو گفتگو سے مانع ہے۔ ہم آپ کے ارشادات سے ہدایت پاتے ہیں اورآپ کے علم کی اقتدا کرتے ہیں۔ بڑے راہب نے کہا کہ میرے بولنے میں یہ امر مانع ہے کہ تم میں ایک محمّدی شخص آ بیٹھا ہے۔ وہ تمہارے دین کی آزمائش کے لئے آیا ہے لیکن یہ اس کی زیادتی ہے۔ سب نے کہا ہمیں وہ شخص دکھا دو ہم فوراً اس کو قتل کر ڈالیں گے۔ اُس نے کہا بغیر دلیل اور حجت کے اس کو قتل نہ کرو، میں امتحاناً اس سے علم الادیان کے چند مسائل پوچھتا ہوں اگر اس نے سب کے صحیح جواب دیئے تو ہم اس کو چھوڑ دیں گے، ورنہ قتل کردیں گے کیونکہ امتحان مرد کی عزّت ہوتی ہے یا رسوائی یا ذِلّت۔ سب نے کہاآپ جس طرح چاہیں کریں ہم آپ کے خوشہ چیں ہیں۔ تو وہ بڑا راہب ممبر پر کھڑا ہوکر پکارنے لگا۔ اے محمّدی، تجھے محمّد کی قسم کھڑا ہو جا کہ سب لوگ تجھے دیکھ سکیں تو بایزید رحمةاللہ علیہ کھڑے ہو گئے۔ اس وقت آپ کی زبان پر رب تعالیٰ کی تقدیس اور تمجید کے کلمات جاری تھے۔ اس بڑے پادری نے کہا اے محمّدی میں تجھ سے چند مسائل پوچھتا ہوں۔ اگر تو نے پوری وضاحت سے ان سب سوالوں کا جواب باصواب دیا تو ہم تیری اتباع کریں گے ورنہ تجھے قتل کردیں گے۔ تو بایزید رحمةاللہ علیہ نے فرمایا کہ تو معقول یا منقول جو چیز پوچھنا چاہتا ہے پوچھ۔ اللہ تعالیٰ تمہارے اور ہمارے درمیان گواہ ہے۔ تو اس پادری نے کہا۔
 
وہ ایک بتاؤجس کا دوسرا نہ ہو اور وہ دو بتاؤ جن کا تیسرا نہ ہو اور وہ تین جن کا چوتھا نہ ہو اور وہ چار جن کا پانچواں نہ ہو اور وہ پانچ جن کا چھٹا نہ ہو اور وہ چھ جن کا ساتواں نہ ہو اور وہ سات جن کا آٹھواں نہ ہو اور وہ نو جن کا دسواں نہ ہو اور وہ دس جن کا گیارہواں نہ ہو اور وہ بارہ جن کا تیرہواں نہ ہو۔
اور وہ قوم بتاؤجو جھوٹی ہو اور بہشت میں جائے اور وہ قوم بتاؤ جو سچّی ہو اور دوزخ میں جائے اور بتاؤ کہ تمہارے جسم سے کون سی جگہ تمہارے نام کی قرارگاہ ہے اور الْذارِیاتِ ذروًا کیا ہے اور اَلْحاَمِلَاتِ وِقْراً کیا ہے اور اَلْجَارِیَاتِ یَسْرًا کیا ہے اور اَلْمُقَسِّمَات ِ اَمْرًا کیا ہے۔ اور وہ کیا ہے جو بے جان ہو اور سانس لے۔ اور ہم تجھ سے وہ چودہ پوچھتے ہیں جنہوں نے رَبُّ العالمین کے ساتھ گفتگو کی اور وہ قبر پوچھتے ہیں جو مقبور کو لے کر چلی ہو اور وہ پانی جو نہ آسمان سے نازل ہوا ہو اور نہ زمین سے نکلا ہو اور وہ چار جو نہ باپ کی پشت اور نہ شکم مادر سے پیدا ہوئے ۔ اور پہلا خون جو زمین پر بہایا گیا۔ اور وہ چیز پوچھتے ہیں جس کو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمایا ہو اور پھراس کو خرید لیا ہو اور وہ چیز جس کو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمایا پھر نا پسند فرمایاہو۔ اور وہ چیز جس کو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمایا ہو پھر اس کی عظمت بیان کی ہو اور وہ چیز جس کو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمایا ہو پھر خو د پوچھا ہو کہ یہ کیا ہے۔ اور وہ کون سی عورتیں ہیں جو دنیا بھر کی عورتوں سے افضل ہیں اور کون سے دریا دنیا بھر کے دریاؤں سے افضل ہیں اور کون سے پہاڑ دنیا بھر کے پہاڑوں سے افضل ہیں اور کون سے جانور سب جانوروں سے افضل ہیں اور کون سے مہینے افضل ہیں اور کون سی راتیں افضل ہیں اور طَآمَّہ کیا ہے۔ اور وہ درخت بتاؤ جس کی بارہ ٹہنیاں ہیں اور ہر ٹہنی پر تیس پتّے ہیں اور ہر پتّے پر پانچ پھُول ہیں دو پھُول دھوپ میں اور تین پھُول سایہ میں ۔ اور وہ چیز بتاؤجس نے بیت اللہ کا حج اور طواف کیا ہو نہ اُس میں جان ہو اور نہ اُس پر حج فرض ہو۔ اور کتنے نبی اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمائے اور اُن میں سے رُسول کتنے ہیں اور غیر رسُول کتنے۔ اور وہ چار چیزیں بتاؤ جن کا مزہ اور رنگ اپنا اپنا ہو اور سب کی جڑ ایک ہواور نقیر کیا ہے اور قطمیر کیا ہے اور فتیل کیاہے اور سبدولبد کیا ہے طَم ّ وَرم ّ کیا ہے۔ اور ہمیں یہ بتاؤ کہ کتّا بھونکتے وقت کیا کہتا ہے اور گدھا ہینگتے وقت کیا کہتا ہے اور بیل کیا کہتا ہے اور گھوڑا کیا کہتا ہے اور اونٹ کیا کہتا ہے اور مور کیا کہتا ہے اور بلبل کیا کہتا ہے اور مینڈک کیا کہتا ہے جب ناقوس بجتا ہے تو کیا کہتا ہے۔ اور وہ قوم بتاؤ جن پر اللہ تعالیٰ نے وحی بھیجی ہو اور نہ انسان ہوں اور نہ جن اور نہ فرشتے ۔ اور یہ بتاؤ کہ جب دن ہوتا ہے تو رات کہاں چلی جاتی ہے اور جب رات ہوتی ہے تو دن کہاں چلا جاتا ہے۔
 
 حضرت بایزید بسطامی رحمتہ اللہ علیہ نے فرمایا کہ کوئی اور سوال ہو تو بتاؤ۔ وہ پادری بولا کہ اور کوئی سوال نہیں۔آپ نے فرمایا اگر میں ان سب سوالوں کا شافی جواب دے دوں تو تم اللہ تعالیٰ اور اس کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ایمان لاؤ گے۔سب نے کہا ہاں،
 
 پھر آپ نے کہا اے اللہ تو ان کی اس بات کا گواہ ہے۔
 
 پھر فرمایا کہ تمہارا سوال کہ ایسا ایک بتاؤ جس کا دوسرا نہ ہو وہ اللہ تعالےٰ واحد قہار ہے اور وہ دو جن کا تیسرا نہ ہو وہ رات اور دن ہیں لقولہ تعالیٰ ( سورة بنی اسرائیل آیت ۲۱) اور وہ تین جن کا چوتھا نہ ہووہ عرش اور کرسی اور قلم ہیں اوروہ چار جن کا پانچواں نہ ہو وہ چار بڑی آسمانی کتابیں تورات، انجیل ، زبور اورقرآن مقدس ہیں اور وہ پانچ جن کا چھٹا نہ ہو وہ پانچ فرض نمازیں ہیں اور وہ چھ جن کا ساتواں نہ ہو وہ چھ دن ہیں جن میں اللہ تعالیٰ نے آسمانوں اور زمینوں کو پیدا فرمایالقولہ تعالیٰ ( سورہ قاف، آیت ۸۳) اور وہ سات جن کا اّٹھواں نہ ہووہ سات آسمان ہیں لقولہ تعالیٰ (سورہ ملک آیت ۳) اور وہ آٹھ جن کا نواں نہ ہو وہ عرش بریں کو اُٹھانے والے آٹھ فرشتے ہیں لقولہ تعالیٰ (سورہ حآقّہ، آیت ۷۱) اور وہ نو جن کا دسواں نہ ہو وہ بنی اسرائیل کے نو فسادی شخص تھے لقولہ تعالیٰ (سورة نمل، آیت ۸۴) اوروہ د س جن کاگیارھواں نہ ہو وہ متمتع پر دس روزے فرض ہیں جب اس کو قربانی کی طاقت نہ ہو لقولہٰ تعالیٰ (سورة بقرہ، آیت۶۹۱) اور وہ گیارہ جن کا بارواں نہ ہو وہ یوسف علیہ السّلام کے بھائی ہیں۔ گیارہ ہیں۔ ان کا بارواں بھائی نہیں لقو لہ تعالیٰ (سورة یوسف، آیت ۴) اوروہ بارہ جن کا تیرواں نہ ہووہ مہینوں کی گنتی ہے لقولہ تعالیٰ (سورہ توبہ، آیت ۶۳) اور وہ تیرہ جن کا چودہواں نہ ہو وہ یوسف علیہ السّلام کا خواب ہے لقولہ تعالیٰ (سورة یوسف، آیت۴) اور وہ جھوٹی قوم جو بہشت میں جائی گی وہ یوسف علیہ السّلام کے بھائی ہیں کہ اللہ تعالےٰ نے ان کی خطا معاف فرمادی ۔ لقولہ تعالیٰ (سورة یوسف،آیت ۷۱) اور وہ سچی قو م جو دوزخ میں جائی گی وہ یہود و نصارےٰ کی قوم ہے لقولہ تعالیٰ (سورة بقرہ، آیت ۳۱۱) تو ان میں سے ہر ایک دوسرے کے دین کو لاشی بتانے میں سچّا ہے لیکن دونوں دوزخ میں جائیں گے اور تم نے جو سوال کیا ہے تیرا نام تیرے جسم میں کہاں رہتا ہے تو جواب یہ ہے کہ میرے کان میرے نام کے رہنے کی جگہ ہیں۔ اور اَلزَّارِیَاتِ ذرْواً چار ہوائیں ہیں ۔ مشرقی ، غربی، جنوبی، شمالی۔ اوراَلْحَامِلَا تِ وِقْراً بادل ہیں لقولہ تعالیٰ (سورة بقرہ آیت ۴۶۱ ) اور اَلْجَا رِیَاتِ یُسْراً سمندر میں چلنے والی کشتیاں ہیں اور اَلْمُقَسِّمَات ِ اَمْراً وہ فرشتے ہیں جوپندرہ شعبان سے دوسرے پندرہ شعبان تک لوگوں کا رزق تقسیم کرتے ہیں ۔ اور وہ چودہ جنہوں نے رَب تعالیٰ کے ساتھ گفتگوکی وہ سات آسمان اور سات زمینیں ہیں لقولہ تعالیٰ(سورة حٰم السّجدہ، آیت ۱۱) اور وہ قبرجو مقبور کو لے کر چلی ہو وہ یونس علیہ السّلام کو نگلنے والی مچھلی ہے۔ اور بغیر روح کے سانس لینے والی چیزصبح ہے لقولہ تعالیٰ اور وہ پانی جو نہ آسمان سے اترا ہو اور نہ زمین سے نکلا ہو وہ پانی ہے جو گھوڑوں کا پسینہ بلقیس نے آزمائش کے لیے حضرت سلیمان علیہ السلام کے پاس بھیجا تھا اور وہ چار جو کسی باپ کی پشت سے ہیں اور نہ شکم مادر سے وہ اسماعیل علیہ السّلام کی بجائے ذبح ہونے والا دنبہ اورصالح علیہ السلام کی اونٹنی اورآدم علیہ السلام اور حضرت حوّا ہیں ۔ اور پہلا خون ناحق جو زمین پر بہایا گیا وہ آدم علیہ السلام کے بیٹے ہابیل کا خون ہے جسے بھائی قابیل نے قتل کیا تھا۔ اور وہ چیز جو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمائی پھر اسے خرید لیا وہ مومن کی جان ہے لقولہ تعالیٰ (سورة توبہ، آیت ۱۱۱) اوروہ چیز جو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمائی پھر اسے ناپسند فرمایا ہو وہ گدھے کی آواز ہے لقولہ تعالیٰ (سورة لُقمان، آیت۹۱)اور وہ چیز جو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمائی ہو پھر اُسے بُرا کہا ہو وہ عورتوں کا مکرہے لقولہ تعالیٰ (سورة یوسف، آیت ۸۲) اور وہ چیز جو اللہ تعالیٰ نے پیدا فرمائی ہو پھر پوچھاہو کہ یہ کیا ہے وہ موسیٰ علیہ السلام کا عصا ہے لقولہ تعالیٰ (سورة طٰہٰ آیت ۷۱)اور یہ سوال کہ کون سی عورتیں دنیا بھر کی عورتوں سے افضل ہیں وہ اُ م البشر حضرت حوّا اور حضرت خدیجہ اور حضرت عائشہ اور حضرت آسیہ اور حضرت مریم ہیں ۔ رَضی اللہ تعالیٰ عنہنَّ اجمعین۔
باقی رہا افضل دریا وہ سیحون ، جیجون ، دجلہ ، فرات اور نیل مصر ہیں ۔ او ر سب پہاڑوں سے افضل کوہِ طور ہے اور سب جانوروں سے افضل گھوڑا ہے اور سب مہینوں سے افضل مہینہ رمضان لقولہ تعالیٰ (سورة بقرہ ، آیت ۵۸۱) اور سب راتوں میں افضل رات لیلةالقدر ہے لقولہ تعالیٰ (سورة قدر، آیت ۳) اور تم نے پوچھا ہے کہ طاْمہ کیا ہے وہ قیامت کا دن ہے۔ اور ایسا درخت جس کی بارہ ٹہنیاں ہیں اور ہر ٹہنی کے تیس پتّے ہیں اور ہر پتّہ پر پانچ پھول ہیں جن میں سے دو پھول دھوپ میں ہیں اور تین سایہ میں ۔ توہ وہ درخت سال ہے۔ بارہ ٹہنیاں اس کے بارہ ماہ ہیں اور تیس پتّے ہر ماہ کے دن ہیں۔ اور ہر پتّے پر پانچ پھول ہر روز کی پانچ نمازیں ہیں دو نمازیں ظہر اور عصر آفتاب کی روشنی میں پڑھی جاتی ہیں اور باقی تین نمازیں اندھیرے میں۔ اور وہ چیز جو بے جان ہو اور حج اس پر فرض نہ ہو پھر اس نے حج کیا ہو اور بیت اللہ کا طواف کیا ہو وہ نوح علیہ السّلام کی کشتی ہے ۔ تم نے نبیوں کی تعداد پوچھی ہے پھر رسولوں اور غیر رسولوں کی تو کل نبی ایک لاکھ چوبیس ہزار ہیں ۔ ان میں سے تین سو تیرہ رسول ہیں اور باقی غیر رسول۔ تم نے وہ چار چیزیں پوچھی ہیں جن کا رنگ اور ذائقہ مختلف ہے حالانکہ جڑ ایک ہے۔وہ آنکھیں، ناک،منہ،کان ہیں۔ کہ مغزسر ان سب کی جڑ ہے۔ آنکھوں کا پانی نمکین ہے۔اور منہ کا پانی میٹھا ہے۔اور ناک کا پانی ترش ہے اور کانوں کا پانی کڑوا ہے ۔تم نے نقیر (سورة نسا آیت ۴۲۱) ،قطمیر ( سورة فاطر آیت ۳۱) ،فتیل (بنی اسرائیل آیت ۱۷)۔
سبدولبد، طمّ ورَمّ کے معانی دریافت کیے ہیں۔کھجور کی گٹھلی کی پشت پر جو نقطہ ہوتا ہے اس کونقیر کہتے ہیں اور گٹھلی پرجو باریک چھلکا ہوتا ہے اس کو قطمیر کہتے ہیں اور گٹھلی کے اندر جو سفیدی ہوتی ہے اسے فتیل کہتے ہیں۔سبدولبدبھیڑ بکری کے بالوں کو کہا جاتا ہے۔حضرت آدم علیہ السلام کی آفرینش سے پہلے کی مخلوقات کو طمّ ورَمّ کہا جاتا ہے۔ اور گدھا ہینگتے وقت شیطان کو دیکھ رہا ہوتا ہے اور کہتا ہے لَعَنَ اللّٰہ ُالْعَشَّار۔ اور کتا بھونکتے وقت کہتا ہے وَیْلُ لِاَھِلِ اْلنَّارِمِنْ غَضَبِ الْجَبَّارِ۔ اور بیل کہتا ہے سُبْحَانَ اللّٰہِ وَبِحَمْدِہ۔ اور گھوڑا کہتا ہے سُبْحَانَ حَافِظِیْ اِذَا اَلتَقَت الْاَبْطَال َوَاشْتَعَلَتِ الرِّجَالُ بِالرِّجَال اور اونٹ کہتا ہے حَسْبِیَ اللّٰہ ُ وَکَفٰی بِاللٰہِ وَکِیْلاَ اور مور کہتا ہے الرَّحْمٰنُ عَلَی الْعَرْشِ اسّتَوٰی (سورہ طٰہٰ آیت ۵۱) ۔ اور بلبل کہتا ہے سُبْحَا نَ ا للّٰہ ِ حِیْنَ تُمْسُوْنَ وَحِیْنَ تُصْبِحُوْنَ (سورة روم آیت ۷۱)۔ اورمینڈک اپنی تسبیح میں کہتا ہیسُبْحَانَ الْمَعْبُودِ فِیْ البَرَارِیْ وَالْقِفَارِ سُبْحَانَ الْمَلِکِ الْجَبَّارِ ( سورة نحل آیت ۸۶) اور ناقوس جب بجتا ہے تو کہتا ہے سُبْحَانَ اللّٰہِ حَقَّا حَقَّا اُنْظُرْ یَاْبنَ اٰدَمَ فِی ھٰذِہِ الدُّنْیَا غَرْبًا وَّشَرْقًا مَّاتَرٰی فِیْھَا اَحَدًایَّبْقٰی ۔ اور تم نے وہ قوم پوچھی ہے جن پر وحی آئی حالانکہ وہ نہ انسان ہیں نہ فرشتے اور نہ جن۔ وہ شہد کی مکھیاں ہیں لقولہ تعالیٰ (سورة نحل آیت ۸۶) تم نے پوچھا ہے کہ جب رات ہو تی ہے تو دن کہاں چلا جاتا ہے اور جب دن ہوتا ہے تو رات کہاں ہوتی ہے ۔ اس کا جواب یہ ہے جب دن ہوتا ہے تورات اللہ تعالیٰ کے غا مض علم میں چلی جاتی ہے ۔ اور جب رات ہوتی ہے تو دن اللہ تعالیٰ کے غامض علم میں چلا جاتا ہے۔ اللہ تعالیٰ کا وہ غامض علم کہ جہاں کسی مقرب نبی یا فرشتہ کی رسائی نہیں ۔
 
پھر آپ نے فرمایا کہ تمہارا کوئی ایسا سوال رہ گیا ہے جس کا جواب نہ دیا گیا ہو ۔ انہوں نے کہا نہیں ۔ سب سوالوں کے صحیح جواب دیے ہیں تو آپ نے اس بڑے پادری سے فرمایا کہ میں تم سے صرف ایک بات پوچھتا ہوں اس کا جواب دو۔ وہ یہ ہے کہ آسمانوں کی کنجی اور بہشت کی کنجی کون سی چیز ہے۔
تو وہ پادری سر بگر یباں ہوکر خاموش ہو گیا تو سب پادری اس سے کہنے لگے کہ اس شیخ نے تمہارے اس قدر سوالوں کے جواب دیئے لیکن آپ اس کے ایک سوال کا جواب بھی نہیں دے سکتے وہ بولا کہ جواب مجھے آتا ہے۔ اگر میں وہ جواب بتاؤں تو تم لوگ میری موافقت نہیں کرو گے۔ سب نے بیک زباں کہا کہ آپ ہمارے پیشوا ہیں ۔ ہم ہر حالت میں آپ کی موافقت کریں گے۔ تو بڑے پادری نے کہا آسمانوں کی کنجی اور بہشت کی کنجی لَا اِلٰہَ اِلَّا اللہ مُحَّمدُ رَّسُولُ اللہ ہے ۔ تو سب کلمہ پڑھ کر مسلمان ہو گئے اور اپنے اپنے زنار وہیں توڑ ڈالے ۔ غیب سے ندا آئی ۔ اے بایزید ہم نے تجھے ایک زنار پہننے کا حکم اس لئے دیا تھا کہ ان کے پانچ سو زنار تڑواؤں ۔
وَلِلّٰہِ الْحَمْدُ

Sunday, 20 October 2013

:::::: دعائے خیر :::::::

ایک آدمی کو قتل کے جھوٹے مقدمہ میں پھنسایا گیا اور پولیس نے اصل قاتل پر پردہ ڈال دیا۔ عدالت میں کیس چلا‘ پہلی ہی پیشی پر بے گناہ ملزم نے درج ذیل دعا کو گڑگڑا کر پڑھا ۔جج صاحب کے سامنے پولیس نے پیش کیا۔ جج بہت سخت آدمی تھا اس نے اس بے گناہ ملزم کی طرف دیکھا اور کیس کی فائل پولیس والوں کے منہ پر دے ماری اور کہا کہ تمہیں یہ شخص قاتل نظر آیا ہے؟ اصل قاتل جو تم نے چھپایا ہوا ہے اسے تین دنوں کے اندر پیش کرو اور اسے باعزت بری کردیا۔

یہ دعا مشہور صحابی حضرت انس بن مالک رضی اللہ عنہ کی ہے ، آپ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے خادم خاص ہیں ، آپ نے دس سال حضور صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت کی ہے ۔ انس رضی اللہ عنہ کی والدہ ماجدہ نے انہیں بچپن میں ہی رسول کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت پر مامور کر دیا تھا اور ان کی والدہ ماجدہ کے التماس کرنے پر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ان کو دنیا اور آخرت کی دعائے خیر سے مشرف فرمایا جس کی وجہ سے آپ نے طویل عمر پائی اور آپ کی سو سے زائد اولاد ہوئی ۔
ایک دن حضرت انس رضی اللہ عنہ حجاج بن یوسف ثقفی کے پاس بیٹھے ہوئے تھے کہ کسی بات پر حجاج آپ پر غضب ناک ہوگیا ۔ اور اس نے کہاکہ اے انس اگر تو نے پیغمبر خدا صلی اللہ علیہ وسلم کی خدمت نہ کی ہوتی اور امیر المومنین عبدالملک بن مروان کا خط تمہاری سفارش میں نہ آیا ہوتا کہ اس نے تمہارے ساتھ رعایت کرنے کے بارے میں لکھا ہے تو میں تمہارے ساتھ وہ کچھ کرتا جو میرا دل چاہتا ۔
حضرت انس رضی اللہ عنہ نے فرمایا ! نہیں اللہ کی قسم تو ہرگز میرے ساتھ کچھ نہیں کر سکتا اور میری جانب بری آنکھ سے نہیں دیکھ سکتا ۔بلاشبہ میں رسول صلی اللہ علیہ وسلم سے چند کلمات کو سن رکھا ہے ، میں ہمیشہ ان کلمات کی پناہ میں رہتا ہوں اور ان کلمات کے طفیل میں کسی بادشاہ کے غلبہ اور شیطان کی برائی سے نہیں ڈرتا ۔ حجاج یہ سن کر ہیبت زدہ ہوگیا اور ایک ساعت کے بعد سر اٹھا کر کہا اے ابو حمزہ وہ کلمات مجھے سکھا دو ۔ حضرت انس رضی اللہ عنہ نے کہا کہ نہیں میں ہرگز وہ کلمات تمہیں نہیں سکھاؤں گا کیوں کہ تم اس کے اہل نہیں ہو ۔
جب حضرت انس رضی اللہ عنہ کی رحلت کا وقت قریب آیا تو آپ کے خادم حضرت ابان رضی اللہ عنہ کے استفسار پر آپ نے ان کو یہ کلمات سکھائے ۔اور کہا کہ انہیں صبح و شام پڑھا کر اللہ تعالیٰ تجھے ہر آفت سے حفاظت میں رکھے گا ۔وہ کلمات یہ ہیں ::
بسم اللہ الرحمن الرحیم۔
بِسْمِ اللہِ عَلٰی نَفْسِیْ وَدِیْنِی۔ بِسْمِ اللہِ عَلٰی اَھْلِیْ وَ مَالِیْ وَوَلَدِیْ۔ بِسْمِ اللہِ عَلٰی مَااَعْطَانِیَ اللہُ۔ اَللہُ رَبِّی لَا اُشْرِکُ بِہٖ شَیْئًا۔ اَللہُ اَکْبَرْ، اَللہُ اَکْبَرْ، اَللہُ اَکْبَرْ، وَاَعَزُّ وَاَجَلُّ وَاَعْظَمُ مِمَّااَخَافُ وَاَحْذَرُ عَزَّ جَارُکَ وَجَلَّ ثَنَائُکَ وَلَآ اِلٰہَ غَیْرُکَ۔ اَللّٰھُمَّ اِنِّیْ اَعُوْذُبِکَ مِنْ شَرِّ نَفْسِیْ وَمِنْ شَرِّکُلِّ شَّیْطَانٍ مَّرِیْدٍ۔ وَمِنْ شَرِّ کُلِّ جَبَّارٍ عَنِیْدٍ۔ فَاِنْ تَوَلَّوْا فَقُلْ حَسْبِیَ اللہُ لَآ اِلٰہَ اِلَّاہُوَ عَلَیْہِ تَوَکَّلْتُ وَہُوَ رَبُّ الْعَرْشِ الْعَظِیْمِ۔ اِنَّ وَلِیَّ اللہُ الَّذِیْ نَزَّلَ الْکِتٰبَ وَھُوَ یَتَوَلَّی الصَّالِحِیْنَ۔
صحیح مسلم ج۲،جامع ترمذی ج۲، خصائص کبریٰ ج۲، مجمع الزوائد

آج بھی اگر کوئی شخص اس دعا کو پڑھے تو کوئی ظالم و جابر اس کو دینی و دنیاوی نقصان نہیں پہنچا سکتا‘ نیز حادثات اور مشکلات سے محفوظ رہے گا۔
پڑھنے کا طریقہ اور اوقات:
صبح اور عشاء کی نماز کے بعد اول وآخر تین مرتبہ درود شریف پڑھ کر یہ دعا پڑھے‘ انشاء اللہ وہی اثرات ہوں گے جو آج سے1400ء سال پہلے تھے۔






 

Thursday, 3 October 2013

کرماں والےبیبے رانے کتهے گئے

کرماں والےبیبے رانے کتهے گئے


خالص مکهن دوده مکهانے کتهے گئے
باسمتی دے چول پرانے کتهے گئے
 
کاٹهے گنے دیسی دانے کتهے گئے
تندرستی دےضامن کهانے کتهے گئے

وید . حکیم. دناء سیانے کتهے گئے
کرماں والے بیبےرانے کتهے گئے

خالص مرچ تے خالص ہلدی کتهے گئ
اینی چینی اینی جلدی کتهے گئ 
 
جیہڑی دال سی چهیتی گلدی کتهے گئ
روپ جوانی ڈهلدی ڈهلدی کتهے گئ

مجرم پهڑن والے ٹهانے کتهے گئے
کرماں والے بیبے رانے کتهے گئے

ہویا ایڈا گهپ ہنیرا دس دا نیئں
اپنی منزل اپناڈیرا دس دا نیئں
 
سجن متر تیرامیرا دس دا نیئں
بتی والا کوئی بنیرا دس دا نیئں

مہر محبت پیار پرانے کتهے گئے
کرماں والےبیبے رانے کتهے گئے

عبیرابوذری